pakistan-corporate-governance

بورڈ کے ارکان

کامران یوسف مرزا

انڈیپنڈنٹ ڈائریکٹر

 

کامران برطانیہ سے سند یافتہ چارٹرڈ اکاونٹنٹ ہیں اور انہوں نے اپنے کیریئر کا آغاز پاکستان میں ایک آڈٹ فرم اے ایف فرگوسن اینڈ کو سے کیا۔ دسمبر، 1970ء میں کامران ، ایک بین الاقوامی فارماسیوٹیکل اورہیلتھ کیئر کمپنی، ایبٹ لیبارٹریز (پاکستان) لمٹیڈ سے بطور چیف فنانشل آفیسر وابستہ ہوگئے۔ سنہ 1977ء میں وہ کم عمر ترین منیجنگ ڈائریکٹر بن گئے اور 29 برس تک ایبٹ پاکستان کے منیجنگ ڈائریکٹر رہے۔ کامران سنہ 2007ء سے 2009ء تک ایکسپورٹ پروسیسنگ زون اتھارٹی کے چیئرمین بھی رہے اور اس کے بعد پاکستان بزنس کونسل (پی بی سی) کے چیف ایگزیکٹو آفیسر بن گئے اور ابھی بھی وہ اس عہدے پر فائز ہیں۔ علاوہ ازیں، یونی لیور فوڈز اور ایجوکیشن فنڈ فار سندھ (EFS) کے چیئرمین کی حیثیت سے خدمات انجام دیتے ہوئے، کامران نے ابیٹ لیباریٹریز اور انٹرنیشنل اسٹیلز(آئی ایس ایل) اور کاروان حیات انسٹی ٹیوٹ فار مینٹل ہیلتھ کیئر کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں بھی خدمات انجام دیں۔ مزید یہ کہ انہوں نے بورڈ آف انویسٹمنٹ (بی او آئی) اور دیگرسرکاری اداروں میں پاکستان بزنس کونسل کی نمائندگی بھی کی۔ کامران نے جودیگر اہم کردار ادا کیے اُن میں چیئرمین، پاکستان مرکنٹائل ایکسچینج لمٹیڈ (پی ایم ای ایکس) - سابق نیشنل کموڈیٹی ایکسچینج لمٹیڈ (این سی ای ایل)، چیئرمین کراچی اسٹاک ایکسچینج (کے ایس ای)، صدر اوورسیز چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری(او سی سی آئی)، صدر امریکن بزنس کونسل (اے بی سی) اور چیئرمین فارما بیوریو (بین الاقوامی فارما سیوٹیکل کمپنیوں کی تنظیم) شامل ہیں۔ اس کے علاوہ وہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان ، پاکستان اسٹیٹ آئل، پاکستان اسٹیل، نیشنل بینک آف پاکستان، پاکستان ٹیکسٹائل سٹی لمٹیڈ، کمپیٹی ٹیونیس سپورٹ فنڈ (سی ایس ایف)، جینکو ہولڈنگ کمپنی اور نیشنل ووکیشنل اینڈ ٹیکنکل ٹریننگ کمیشن کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں بھی خدمات انجام دے چکے ہیں۔ کامران پلاننگ کمیشن کی جانب سے فارماسیوٹیکل انڈسٹری کے لیے قائم کی گئی ٹاسک فورس کے چیئرمین، وفاقی حکومت کی اقتصادی مشاورتی بورڈ اورسندھ وائلڈ لائف بورڈ کے رُکن بھی رہ چکے ہیں۔وہ انسٹی ٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس آف پاکستان کے کوالٹی کنٹرول بورڈ کے رکن بھی رہ چکے ہیں اور پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف کارپوریٹ گورننس (پی آئی سی جی) میں باقاعدگی سے لیکچر بھی دیتے ہیں۔

جواؤ مینوئل

منیجنگ ڈائریکٹر

 

جواؤپی ایم آئی کے ساتھ کام کرنے کا 20 سالہ متاثر کن تجربہ رکھتےہیں۔ انہوں نے اپنے کیرئیر کا آغازسوئزرلینڈ میں آپریشنز ٹرینی کے طور پر کیا اور سنہ 1998ء میں اپنے بین الاقوامی کیرئیرمیں ترقی کرتے ہوئے  پرتگال میں مینوفیکچرنگ ڈیویلپمنٹ  منیجر تعینات ہو گئے۔ اس کے بعد سے ان آپریشنز میں ان کا کیریئر یورپی یونین ، مشرقی یورپ ،مشرق وسطیٰ (ای ای ایم اے)، لاطینی امریکا اور کینڈا (ایل اے اور سی) کی کئی مارکیٹوں  پر پھیلا ہوا ہے  جس میں مینوفیکچرنگ، انجنیئرنگ اور پلاننگ کے شعبے شامل ہیں۔سنہ 2004ء میں، جواؤ پہلے رومانیہ میں ڈائریکٹر آپریشنز تعینات ہوئے جس کےبعد، انہوں نے، سربیا اور ارجنٹائن میں بھی اسی حیثیت سے کام جاری رکھا۔ بعد ازاں، سنہ 2011ء میں ای ای ایم اے ریجن کے لیے وائس پریذیڈنٹ آپریشنز مقرر ہو گئے۔

 

جواؤ کی قیادت میں، ای ای ایم اے آپریشنز کے ادارے نے انتہائی اعلیٰ سطح پر مسلسل کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے  اور مزیدمسلسل بہتری کے لیے متاثر کن ذہنی  روئیے کا مظاہرہ کیا۔ یورپی یونین ، مشرقی یورپ ،مشرق وسطیٰ (ای ای ایم اے) کی انتظامی ٹیم میں جواؤ کی کارکردگی اور ساتھ ہی مؤثرقیادت، کاروباری صلاحیت اور نتائج  کے لیے قوت عمل نے  خطے میں اپنے نقوش چھوڑے ہیں اور وہ ان خصوصیات کو ایشیا میں بھی لے کر آئے ہیں جن کی بہت قدر کی جائےگی۔

لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان

انڈیپنڈنٹ ڈائریکٹر

 

لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان ایک تین ستاروں والے جنرل ہیں جنہیں ہلال امتیاز ملٹری ، یونائٹیڈ اسٹیٹس ملٹری لیجن آف میرٹ، دی لبریشن آف کویت اور ڈیفنس آف سعودی عربیہ میڈلز مل چکے ہیں۔ وہ حال ہی میں ریٹائر ہوئے ہیں اور انہیں ایک ایسے جنگجو کماندار کے طور پر پہچانا جاتا ہے جنہوں نے ، مختلف حیثیتوں سے، فاٹا اور مالاکنڈ ڈویژن میں فوج کی قیادت کی ہے۔ انہوں نے کمانڈ اینڈ اسٹاف کالج ، کوئٹہ اور نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی ، اسلام آباد،سے گریجویشن کیا ہے۔ان کے پاس وار اسٹیڈیز میں ماسٹرز کی ڈگری بھی ہے۔ لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان کمانڈ اینڈ اسٹاف کالج، کوئٹہ اور نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی، اسلام آباد میں فیکلٹی کے طور پر بھی خدمات انجام دے چکے ہیں۔ اپنی ریٹائرمنٹ کے بعد سے، لیفٹیننٹ جنرل (ر) طارق خان نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں سینئر مینٹور سمیت متعدد معروف یونیورسٹیوں کے اعزازی فیکلٹی بھی ہیں۔ جنرل صاحب کے پاس ممتاز کارپوریٹ اداروں کے میں بطور مشیر کام کرنے کا وسیع تجربہ موجود ہے اور اس وقت وہ فوجی فرٹیلائزر کمپنی لمٹیڈ، ایف ایف سی انرجی لمٹیڈ اور فوجی فریش این فریز لمٹیڈ کے چیف ایگزیکٹو اور منیجنگ ڈائریکٹر ہیں۔

محمد ذیشان

ڈائریکٹر

 

محمد ذیشان نے سنہ 2006ء میں پاکستان سے چارٹرڈ اکاونٹنٹ کی سند حاصل کی۔ سنہ 2008ء میں ،انہوں نے اپنے کیرئیر کا آغاز فلپ مورس سے بطور منیجر مارکیٹنگ فنانس برائے پی ایم پی کے ایل کیا۔ اس وقت سے وہ پورے شعبے میں متعدد ذمہ داریاں نبھا چکے ہیں جن میں ریجنل اسٹنٹ برائے ہانگ کانگ بھی شامل ہے۔ انٹرنل کنٹرولز، بزنس ڈیویلپمنٹ اینڈ پلاننگ اور زون منیجر ان کمرشل میں اپنے تجربے باعث وہ لوزان  چلے گئے جہاں انہوں نے دو سال بطور منیجر کارپوریٹ فنانشل پلاننگ اینڈ رپورٹنگ کے طور پر خدمات انجام دیں۔

لیم کینگ وی

ڈائریکٹر

 

اردو میں پروفائل جلد ہی آ رہی ہے

پتارا پورن اوتپون

ڈائریکٹر

 

اردو میں پروفائل جلد ہی آ رہی ہے

مائیکل شیرر

ڈائریکٹر

 

تمباکو کی صنعت میں شیرر نے انجنیئر کی حیثیت سے اپنے کیرئیر کا آغاز، سنہ 1992ء میں، آسٹریا ٹوبیکو (وینا) سے کیا جہاں وہ سنہ 1997ء تک تعینات رہے۔اس کے بعد، انہوں نے فلپ مورس جرمنی میں بطور منیجمنٹ ٹرینی شمولیت اختیار کر لی اور سنہ 2001ء تک مختلف عہدوں پر ترقی کرتے ہوئے پروجیکٹ لیڈ ایس اے پی امپلی منٹیشن کے عہدے پر فائز ہو گئے۔ اس کے بعد سے انہوں نے پی ایم آئی گلوبل کے ملحق اداروں میں کام کیا۔ مائیکلر شیرر نے ٹیکنکل یونیورسٹی آف وینا سے میکینکل انجنیئرنگ اینڈ بزنس منیجمنٹ میں ماسٹرز ڈگری حاصل کی ہے۔

OR Share via e-mail